اپنے پیارے نبی ﷺ کی توہین کسی صورت قبول نہیں، وزیراعظم نے مغربی دنیا کو دوٹوک پیغام دیدیا

وزیراعظم عمران خان نے او آئی سی کے سفیروں سے ملاقات میں کہا ہے کہ افسوس کے ساتھ مسلم ممالک ابھی تک مغرب کو یہ بات باور کروانے میں ناکام رہے ہیں کہ نبی پاک ﷺ کی توہین سے ڈیڑھ ارب پاکستانیوں کے جذبات مجروح ہوتے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے مغربی دنیا کو واضح پیغام دیتے ہوئے کہا ہے کہ اپنے پیارے نبی حضرت محمد ﷺ کی شان میں گستاخی کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی۔ نبی ﷺ کی محبت ان کے دلوں میں بستی ہے۔ ہماری بدقسمتی ہے کہ مغربی ممالک ہمارے جذبات کو مجروح کرتے ہیں اور ہم انہیں کوئی واضح پیغام دینے میں ناکام رہتے ہیں۔ وزیراعظم عمران خان نے اسلامی ممالک کی تنظیم او آئی سی کے سفیروں سے ملاقات کی ہے۔ جس میں انہوں نے کہا کہ مسلم ممالک مغرب کو کوئی واضح پیغام دینے میں ناکام رہے ہیں۔

خبر جاری ہے۔۔۔

ہم آج تک یہ باور نہیں کرواسکے کے نبی ﷺ کی شان میں گستاخی سے ڈیڑھ ارب مسلمانوں کے جذبات کس حد تک مجروح ہوجاتے ہیں۔ انہوں نے واضح پیغام میں کہا کہ یہ کسی صورت آزادی اظہار کا مسئلہ نہیں ہے۔ ہمیشہ دہشتگردی کو اسلام سے منسوب کیا جاتا ہے۔ لیکن حقیقت میں ایسا نہیں ہے۔ اسلام نے ہمیشہ ظلم اور زیادتی کی مذمت کی ہے۔ اس لیے کسی ایک فرد کی وجہ سے پوری دنیا کو مورد الزام نہیں ٹھہرایا جاسکتا۔ وزیراعظم نے تمام سفیروں پر زور دیا کہ وہ مغرب میں بڑھتے اسلاموفوبیا پر مل کر کام کریں۔ تاکہ بین المذاہب ہم آہنگی پیدا ہوسکے۔

خبر جاری ہے۔۔۔

او آئی سی اسلام کا حقیقی تشخص اجاگر کرنے اور اسلام کے امن کے پیغام کو دنیا میں پہنچانے کے لیے اپنا کردار ادا کرے۔ انہوں نے کہا کہ دنیا کو بتانا ہوگا کہ اسلام انتہاپسندی کا نہیں بلکہ امن پسندی کا پیغام دیتا ہے۔ جس کے لیے امت مسلمہ کو اجتماعی کوششیں کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ انہوں نے واضح کہا کہ وہ بین المذاہب ہم آہنگی کے لیے بین الاقوامی برادری سے ہر فورم پر بات چیت کے لیے تیار ہیں۔

Show More

Related Articles

Back to top button
error: Content is protected !!