امارات واپسی کے لیے پاکستانی شہری منہ مانگا کرایہ دینے کو تیار ہو گئے،اگلے دو روزکے دوران ٹکٹس کی قیمتیں 2 ہزار درہم تک جا سکتی ہیں

متحدہ عرب امارات کی جانب سے پاکستان سے آنے والی پروازوں پر پابندی کا اعلان ہو گیا ہے ، اس پابندی کا اطلاق 12 مئی کی رات یعنی بُدھ کو 11:59 پر ہوگا ۔ جس کے بعد غیر معینہ مُدت کے لیے پروازیں بند ہو جائیں گی۔ اس وقت ہزاروں پاکستانی وطن میں عید کی تعطیلات کی غرض سے موجود ہیں۔ تاہم پابندی کے اعلان نے انہیں شدید پریشانی میں مبتلا کر دیا ہے۔ کچھ افراد نے عید کے فوراً بعد واپس آنا تھا کیونکہ انہیں اپنی ڈیوٹی پر پہنچنا ہے۔ لیکن اس پابندی کی وجہ سے ان کے لیے بڑی مصیبت کھڑی ہو گئی ہے۔ محدود فلائٹس کی وجہ سے بہت سے پاکستانی ایسے ہیں جن کی اگلے دو روز میں امارات میں واپسی بہت مشکل ہوگی۔ جس کی وجہ فلائٹس میں سیٹوں کی کمی ہو گی۔ جن فلائٹس نے آج کل میں روانہ ہونا تھا، ان میں بہت کم سیٹیں دستیاب ہوں گی۔

MICE اور انٹرنیشنل ٹریول سروسز (ITS) کے شعبہ ہالیڈیز کے مینجر راجا میر وسیم نے بتایا ہے کہ اس پریشان کُن صورت حال میں ایک اور پریشانی یہ پیدا ہونے والی ہے کہ امارات واپسی کے لیے ٹکٹس کی قیمتوں میں بے پناہ اضافہ ہو سکتا ہے۔ جن افراد نے مئی کے مہینے میں ہی واپس امارات پہنچنا تھا۔ اس پابندی کی وجہ سے ان کا اس مہینے واپس جا نا مشکل ہو جائے گا۔ ان کے پاس اب یہی صورت ہے کہ اگلے دو روز کے اندر کسی طرح واپس پہنچ جائیں گے۔ایک اور پاکستانی ٹریول ایجنٹ کا کہنا تھا کہ اگر اگلے دو ہفتوں میں دو ہزارپاکستانیوں نے امارات واپس جانا تھا۔ اب پابندی کی وجہ سے ان دو ہزار پاکستانیوں کی یہی کوشش ہو گی کہ وہ ان دو روز کے اندر ہی واپس پہنچ جائیں۔ ہر کوئی پابندی کے عائد ہونے سے پہلے کے ان دنوں میں امارات بھاگنا چاہے گا۔ جس کا نتیجہ یہ ہو گا کہ امارات کے لیے کرایوں میں بے پناہ اضافہ ہو سکتا ہے۔ بھرپور امکان ہے کہ یکطرفہ ٹکٹ کا کرایہ عام دنوں کے کرائے میں دُگنا ہو سکتا ہے۔ چونکہ بہت کم سیٹیں دستیاب ہیں، اس لیے امارات واپسی کی ٹکٹ کا کرایہ 2 ہزار درہم تک پہنچ جانے کا امکان ظاہر کیا جا رہا ہے۔ لوگوں کے لیے اب دو ہی راستے ہیں ، یا تو وہ اپنی فلائٹس ری شیڈول کروا کر پابندی ہٹنے کا انتظار کریں یا پھر مہنگے داموں ٹکٹس خرید کر امارات واپسی کی کوشش کریں۔

راجا میر وسیم نے بتایا کہ کلائنٹس کی جانب سے دھڑادھڑ کالز موصول ہو رہی ہیں جن میں درخواست کی جا رہی ہے کہ اماراتی حکومت کے پابندی کے اعلان کے بعد اپنے آبائی وطن تعطیلات پر گئے ملازمین کی ٹکٹ کی بکنگ تبدیل کر کے اگلے ایک دو روز کی کر دی جائے تاکہ وہ پابندی کے لاگو ہونے کے وقت سے پہلے پہلے امارات واپس پہنچ جائیں۔ اس صورت حالت میں کمپنیوں کے مالکان بھی بہت پریشان ہیں ، جن کے ملازمین تعطیلات پر پاکستان، بنگلہ دیش، سری لنکا اور نیپال گئے ہیں۔ ان ملازمین کی موجودگی سے ان کے کاموں کا بہت زیادہ خرچ ہو گا۔ پاکستان میں پھنسے جن ملازمین کے فلائٹس شیڈول میں تبدیلی کر دی گئی ہے، انہیں کہا گیا ہے کہ وہ فوراً پی سی آر ٹیسٹ کروا کر نیگیٹو رپورٹ حاصل کریں تاکہ ان کی کل یا پرسوں کی فلائٹ کے ذریعے امارات واپسی میں کوئی رکاوٹ پیدا نہ ہو سکے۔ ان کا کہنا تھا کہ جو لوگ امارات سے باہر تفریح منانے کے لیے تعطیلات پر جانے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ انہیں موجودہ صورت حال کے پیش نظر اپنے تفریحی پروگرامز کو ملتوی کر دینا چاہیے ۔ کیونکہ بھارت، پاکستان، نیپال، بنگلہ دیش اور سری لنکا سے آنے والے مسافروں پر پابندی کے بعد کچھ یقین سے نہیں کہا جا سکتا کہ مزید ممالک کے مسافروں پر بھی امارات واپسی پر کس وقت پابندی لگ سکتی ہے۔
Source: Khaleej Times

Show More

Related Articles

Back to top button
error: Content is protected !!